Education

اُونٹ کو چھت پر باندھ دو معلوماتی تحریر ۔۔۔۔ ضرور پڑھئیے دوستوں کے ساتھ ضرور شیئر کریں

حضرت عبد اللہ بن خفیف رحمتہ اللہ علیہ کے مریدین میں سے دو افراد کا نام احمد تھا آپ رحمتہ اللہ علیہ دونوں میں امتیاز کے لیے ایک کو احمد کہہ اور دوسرے کو احمدمہ کے نام سے پکارا کرتے تھے لیکن آپکو احمد کہہ سے زیادہ رغبت تھی۔ جبکہ احمد مہ عبادت و ریاضت میں احمد کہہ سے کہیں زیادہ تھے اور یہ بات تمام مریدین کو ناگوار خاطر بھی تھی کہ آپ عابد و زاھد سے محبت کیوں نہیں کرتے۔ چنانچہ آپ نے مریدین کے احساسات کو محسوس کرتے ھوئے ایکاجتماع عام میں احمد مہ سے

فرمایا کہ جا کر اُونٹ کو چھت پر باندھ دو لیکن اس نے عرض کیا کہ چھت پر اُونٹ کیسے چڑھ سکتا ھے؟ پھر جب آپ نے احمد کہہ کو حکم دیا تو وہ آمادہ ھو گیا اور اُونٹ کو دونوں ھاتھوں سے اُوپر اُٹھانے کی کوشیش کی لیکن اُونٹ میں حرکت تک نہ ھو سکی یہ دیکھ کر حضرت عبد اللہ بن خفیف رحمتہ اللہ علیہ نے فرمایا کہ ظاھر و باطن میں یہی فرق ھوتا ھے احمد کہہ قلب سے میری اطاعت کرتا ھے جبکہ احمد مہ صرف ظاھری عبادت پر نازاں ھے۔

Comments

comments

Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Most Popular

To Top