Education

کافر کو کافر مت کہو ۔۔۔۔۔۔۔ ضرور پڑھیں اور دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

کھیل سارا بگڑ گیا ۔۔۔۔ سوچا کچھ ہوا کچھ

کھیل سنبھالیں کیسے ؟ ۔۔۔۔چلے تھے پاکستان کی اینٹ سے اینٹ بجانے لیکن اپنی ہی بج گئی ۔
جس نئی نسل کو قادیانیت کی ’’ق‘‘ کا بھی نہیں پتا تھا وہ بھی قادیانیت کے فتنے سے بخوبی آگاہ ہو گئی ۔۔۔
مگر لبرل پریشان ہوگئے ۔۔۔۔۔یہ کیا ہو گیا بنا بنایا کھیل بگڑ گیا ۔۔۔۔مہرے بے نقاب ہو گئے ۔۔۔۔۔
قابلِ غور بات ہے جناب ! جو فرعون جس بچے کی تلاش میں بنی اسرائیل کے ہر بچے کو قتل کررہا ہے وہی بچہ اس کے محل میں پرورش پا رہا تھا ۔۔۔
’’صاحبِ زور‘‘ سے جو بات درباری علماء کہہ نہیں پارہے خدا کی قدرت وہ سارے نعرے دامادِ اول لگا رہے ہیں۔۔۔۔۔وہ بھی چیخ چیخ کر غداری کا فتویٰ لگا رہے ہیں ۔۔۔۔۔صورتِ حال ایک حلف نامے پر بگڑی تو دیگر اداروں تک جا پہنچی ۔۔۔۔۔
لبرل بچے پریشان ہو گئے یہ کیا ہو گیا ۔۔۔۔۔۔اگلے معاف کرانے چلے تھے پچھلے بھی گلے پڑ گئے ۔
کہنے لگے کافر کو کافر نہیں کہنا چاہیے ۔
ان لبرل بچوں سے پو چھیے ننھے کاکے کافر کو کافر کیوں نہیں کہنا چاہیے ؟
تو ننھے کاکے نے کہا ’’آگے چل کر مسلمان ہو گیا تب ‘‘کیا ہوگا
ننھے کاکے کی بات سُن کر مجھے بچپن میں سُنی ہوئی سید محمد ہاشمی میاں کی تقریر میں دی گئی مثال یاد آ گئی ۔
کہتے ہیں کہ میں ایک جگہ سے گزر رہا تھا کہ میں نے دیکھا ایک بچہ اور بچی کھیل رہے ہیں کسی بات پر دونوں میں لڑائی ہو گئی لڑکے نے لڑکی پر مٹی پھینک دی ۔
میں لڑکے کے پاس گیا اور اس سے پوچھا: تم نےاس پر مٹی کیوں پھینکی ؟
لڑکے نے جواب دیا :’’یہ میری لگتی ہے ‘‘
میں نے پوچھا تمہاری کیا لگتی ہے ؟
کہنے لگا : بس میری لگتی ہے ۔
میں نے سوال گھما کر پوچھا اس لڑکی کا باپ تمہارا کون ہے ؟
اس لڑکے نے کہا اس لڑکی کا باپ میرا ماموں ہے
تو میں نے پوچھا کہتا کیوں نہیں ہے یہ میری ماموں زاد بہن ہے ؟
تو لڑکا کہنے گا ’’آگے جا کر بیوی ہو گئی تب ‘‘
میں نے کہا جب بیوی ہو گئی تب بیوی کہنا ابھی تو بہن کہو ۔
بس مجھے تو لگتا ہے ’’کافر کوکافر نہ کہو ‘‘ یہ وہی بچہ ہے یا اس کی ذریت
جناب ! کافر کو کافر ہی کہا جائے گا ۔۔۔۔قرآن کا اسلوب یہ ہی ہے۔۔۔۔۔جب مسلمان ہو گا تب اس کو مسلمان کہیں گے ابھی تو کافر ہے کافر ہی کہا جائے گا ۔
اس فارمولے کے مطابق تو مسلمان کو مسلمان نہ کہو آگے جا کر مرتد ہو گیا تب ؟
بے لگام ننھے منے لبڑ چو ! تکفیر پر جو تم بات کررہے ہو کہ قادیانیت کی تکفیر نہ کی جائے پہلے ذرا قادیانیت کے بارے میں معلوم تو کیا جائے وہ کہتے ہیں جو کذاب مرزا کو نبی نہ مانے وہ کافر ہے۔۔۔ یعنی سب مسلمان کافر ہیں اور یہ کافر مسلمان۔
ننھے منے لبرل کاکوں پہلے جا کر مرزا ئیوں سے پوچھیں آپ مسلمان ہیں بھی یا نہیں ۔۔۔۔۔۔وہ آپ کو مسلمان نہیں مانتے ہیں جب تک آپ مرزا کو نبی نہیں مانتے ۔
سورج میں لگے دھبہ فطرت کے کرشمے ہیں
بت ہم کو کہیں کافر، اللہ کی مرضی ہے

تحریر: محمد اسمٰعیل بدایونی

دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

Comments

comments

Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Most Popular

To Top